اردو بلاگنگ، بلاگروں کی بلاگیوں کے بارے میں بلاگروں کی رائے

اچھا جی تو آج سے تین سال پہلے ذرا منہ پھیریں آپکے گنتی کے اردو بلاگر ملیں گے۔ بلکہ شاید گنتی بھی نہ کرنا پڑے۔ اب حال یہ ہے کہ موبائل تلاش کرنے کے لئے تکیہ اٹھاؤ تو نیچے سے ایک اردو بلاگر نکل ہی آتا ہے۔ آپ کہیں گے پھینک رہا ہے جبکہ ایسا ہے نہیں۔ ماشاءاللہ اب اردو بلاگروں میں اضافہ ہوتا جا رہا ہے۔ ہمارا نِکا سا پِنڈ اب ایک شہر بن گیا ہے۔

بلاگروں کی بات کریں تو سیاست سے لیکر مزاح تک لکھنے والے اردو بلاگر موجود ہیں۔ بلکہ میری نظر میں اردو بلاگنگ انگریزی میں کاؤں کاؤں کرنے سے بوت بہتر ہے۔ ایک تو آپکی اپنی زبان ہے دوسرے یہ دیہان نی رکھنا پڑتا کہ یار ٹینس کونسا استعمال کرنا ہے۔ ایسے انگریزی کے بلاگر بھی ہیں جو لکھتے ہیں تو بندہ سوچتا ہی رہ جاتا ہے کہ اس نے بندہ مارا ہے، مارا تھا یا مارنا ہے۔ اردو میں تو ڈفر جیسے بندے بھی اپنی بات کہہ کے نکل جاتے ہیں۔تو حضور نیچے کچھ تبصرے ہیں۔ میں نے سوچا کہ بڑے لوگوں کی بڑی باتیں ذرا عام بندے سے بھی پوچھیں کہ وہ اردو بلاگنگ کو کس نظر سے دیکھتا ہے۔

اردو بلاگنگ انگریزی بلاگروں کی نظر میں:

بقول امانت علی: ان کے منہ کو ایڈسنس لگ گیا ہے، انہیں اردو بلاگنگ کہاں پسند۔ اور جو تبصرے ہوئے انگریزی بلاگروں کی زبانی ان کا حال بھی یہی ہے۔ کچھ کا کہنا ہے کہ لوگ مشکل سے کسی اردو بلاگ کو پڑھتے ہوں، کچھ کہتے ہیں کہ اردو کی بورڈ بہت کم لوگوں کے پاس ہے۔ ایک بھائی صاحب  کہتے ہیں کہ 0.000٪ لوگ اردو بلاگوں کی جانب متوجہ ہوئے ہیں۔ ایک صاحب نے فرمایا کہ اردو بلاگنگ میں مزہ ہے لیکن اردو بلاگروں میں برداشت کی کمی ہے۔ (حیرت ہے) ایک بلاگر کہہ گئے ہیں کہ پاکستانیوں کو بالخصوص اردو میں بلاگنگ کرنی چاہئے۔ایک کاروباری حضرت کا کہنا تھا کہ مارکیٹ میں اردو بلاگنگ کا کمپٹیشن بہت کم ہے اس لئے اچھا ہے۔ ایک بھائی نے کہا کہ انہوں نے اردو بلاگروں سے زیادہ کسی کو مدد گار نہیں پایا۔

اردو بلاگنگ اردو بلاگروں کی نظر میں:

اس پر کسی نے کوئی خاص تبصرہ نہیں کیا۔ ڈفر کہتا ہے کہ اس کے خیالات اس بارے اچھے ہیں، جبکہ اردو اور انگریزی کو وہ الگ الگ نظر سے دیکھتا ہے۔ (ڈفر جو ہوا) باقی اردو بلاگر مثلاً جعفر بھائی کے بھی اس بارے اچھے خیالات ہے۔ ایک بھائی کی زبان سے یہ الفاظ بھی نکلے اور میں جوں کا توں ان کو یہاں لکھ رہا ہوں:

ویسے میں نے دیکھا ہے کہ اردو بلاگنگ مجموعی طور پر زیادہ بے تکلفانہ اور پر اعتماد رویہ رکھتی ہے۔ جیسے آپ اپنے گھر کے صحن میں بیٹھے دوستوں سے باتیں کر رہے ہوں اور آپ کو بالکل پرواہ نہیں کہ کون آپ کی باتوں سے کیا اثر لیتا ہے۔ جبکہ انگریزی بلاگنگ (پاکستان میں) قدرے عدم اعتماد کا شکار ملتی ہے، انگریزی لکھنے والے چونکہ ذہنی طور پر پوری دنیا کو مخاطب کر رہے ہوتے ہیں ، اس لئے میں نے عموماً ان کا انداز دفاعی سا پایا ہے اور اس میں دانشورانہ تصنع بھی کافی پایا جاتا ہے ۔

خیر جو بھی ہو یہ تو ظاہر ہے کہ انگریزی بلاگروں کی زیادہ تعداد کماؤ پوت بننے کے لئے بلاگنگ کرتے ہیں جبکہ اردو بلاگروں میں زیادہ تعداد ان کی ہے جو صرف لکھنا چاہتے ہیں۔ ان کو کوئی پڑھتا ہے یا نہیں اس سے شاید ہی کسی اردو بلاگر کو فرق پڑتا ہو اور اب ایسا بھی نہیں کہ اردو بلاگروں کو کوئی لفٹ ہی نہیں کرواتا۔اردو بلاگر، پٹھانوں کی مارکیٹ کی طرح ہیں  کوئی ان کا بلاگ چھوڑ کر اگلے بلاگ پہ چلا بھی جائے تو ان کو اعتبار نہیں۔ اردو بلاگر کھلے دل کے ہوتے ہیں آپ دیکھ سکتے ہیں کہ بہت ہی کم بلاگرز کے بلاگ پر کسی دوسرے بلاگ کا لنک نہیں ہوگا ورنہ تقریباً ہر بلاگ پر آپکو اردو بلاگروں کی ایک لمبی لسٹ نظر آئے گی۔ ہمیں کیا کہ ہمارا پی آر کتنا ہے یا ڈی اے کتنا ہے۔ خصماں نو کھا گیا ایس ای او۔

Comments